پاکستان میں انصاف کی صورتحال اور 2018 کے انتخابات

سن 2018 الیکشن کا سال ہے-آپ کے منتخب کیے ہوئیے لوگ پانچ سال تک آپ پر مسلط رہے گے-سوچ سمجھ کے بلا خوف و خطر اپنے ووٹ کا استعمال کریں- ایسے لوگ منتخب کرے جو غربت اور مہنگائی کا خاتمہ کر سکے- روز گار کے مواقع دلا سکے- بے گھر لوگوں کو اپنا  آشیانہ د لا سکے۔

عوام کو جان، مال اور عزت کا تحفظ دے سکے کہ ہم لوگ چین کی نیند سو سکیں-میں نے  سیاسی لیڈروں سے میرٹ پر  پارٹی ٹکٹ  دینے کی درخواست کی لیکن  ہمیشہ وہی خوشامدی لگ آتے ہیں جو خوب پیسہ لگائیں- سیاسی پارٹیاں رشتے داروں، عزیزوں، دوستوں اور ٹولوں میں بٹ گئی ہیں-کوئی اپنی اہلیت اور قابلیت سے کسی سیٹ پر نہیں آ سکتا-یہ کیسی جمہوریت ہے؟!پھر بھی مجھے امید ہے کہ شا يد کس کا ضمیر جگ جائے اور مجھے  اہلیت ،قابلیت وسیع تجربے اور طویل خدمات کی بنیاد پر پارلیمنٹ میں سیٹ مل جائے- میں نے نگران حکومت کے لیے  بھی اپنا نام پیش کیا ہے- اس کی بہت اہم اور   بنیادی  وجوہات ہیں- کوئی سیاسی پارٹی  یہ نہیں کہ سکتی کہ میں ان کے خلاف ہوں نہ ہی کوئی یہ کہ سکتا ہے کہ میں کسی پارٹی کا حلیف رہا ہوں- سب سے  بڑی بات یہ  ہے کہ میں عوام میں سے ہو ں- صرف اہم عہدوں پر فائز رٹائر شخصیتوں کا تجربہ قیام پاکستان سے ہی جاری ہے اور اس کے نتائج سے پوری قوم واقف ہے-میں چیلنج دیتا ہوں کہ اگر دونوں ایوانوں کے ممبرز کا پندرہ مضامین کا امتحان ہو تو میں ٹاپ ٹین میں ہوں گا-قابل انسان ہی اچھی حکومت کر سکتا ہے! میں تو سمجھتا ہو کا جب تک عام آدمی اسمبلی میں نہیں آ سکتا جمہوریت اور الیکشن کا کوئی فائدہ نہیں ہے- حیرت کی بات ہے کہ آج انسان کی اہمیت اس کے چھاپے ہوئیے نوٹوں کے مقابلے میں کچھ نہیں- انسانی محنت اور خدمات کی اہمیت بہت کم ہو گئی ہے-تمام کوششوں کے باوجود کام نہیں ملتا-پیسے کی ضرورت بہت بڑھ گئی ہے لیکن اس کو کمانے کے مواقع میسر نہیں

پاکستان کی تاریخ میں کبھی کسی با رسوخ اور  کروڑ پتی شخص کو سزا نہیں ہوئی یا  ہوئی تو نا  فذ  نہ ہو سکی-کروڑوں روپے لوٹنے  والے چین کی نیند سوتے ہیں لیکن غریب اور مظلوم لوگ تشدد سہتے ہیں-یہ کیسا انصاف ہے؟ اس کی وجہ یہ کہ امیر طبقہ ر شو ت یا بھتا دے کر بچ جاتا ہے لیکن غریب لوگ پھنس جاتے ہیں- پاکستان میں نسل اور زبان کی نفرت اور تعصب سے پیدا ہونے والے جرائم بہت زیادہ ہیں-طاقتور  لوگوں نے با رسوخ لوگوں کے گٹھ جوڑ سے  گینگ بنائیے ہوئیے ہیں جو قانون کی گرفت سے بالاتر ہیں کیوں کہ بہت سے حکومتی اداروں کے لوگ ان میں شامل ہیں- مجھے بہت خوشی ہے کہ جہا ں برے لوگ ہیں  وہاں کچھ اچھے لوگ بھی ہیں- اور آپ کو پتہ ہے کہ دنیا اچھے لوگوں کی وجہ سے قائم ہے ورنہ خدا کا عذاب آ جاتا! میں اور لوگوں کی طرح بزدل انسان نہیں-میں نے قاتلوں کو بے نقاب کر دیا-

کہتے ہے کہ کسی انسان کو ظلم سے نجات دلانا نماز، روزے اور حج سے زیادہ قابل ثواب ہے کیونکہ ایک معصوم انسان کا قتل پوری انسانیت کا قتل ہے- اسی طرح ایک انسان کی جان بچانا پوری انسانیت کی جان بچانے کے برابر ہے- لاہور کے اس علاقے میں جھٹکا دینے والے یا درد پیدا کرنے والے خفیہ ہتھیا روں  سے مجھے رات کے کسی وقت نیند سے جگا دیا جاتا ہے- طویل عر صے تک ایسا تشدد جان لیوا  ثابت ہوتا ہے- انسان دوست لوگوں اور خدا کے نیک بندوں  سے درخواست ہے کہ وہ میرے خلاف اس ظلم کو روکنے کے لیے اقدام کریں کہ کسی مظلوم کی مدد کرنا بہت بڑی نیکی ہے۔